Read/Present your poetry in Sahityapedia Poetry Open Mic on 30 January 2022.

Register Now
· Reading time: 1 minute

میری وفاؤں کا دے کر صلہ گیا کوئی۔

میری وفاؤں کا دے کر صلہ گیا کوئی۔
آتش عشق وفا سے بجھا گیا کوئی۔
💖
وہ زہر دیتا ہے مجھ کو دعا بھی دیتا ہے۔
امیدے عمر درازي جگا گیا کوئی۔
💖
کسی کی یاد میں کھوئے ہوئے تھے ہم بھی تو ۔
نقاب یادوں کے آ کر ہٹا گیا کوئی۔
💖
خطا جو ہوتی تو ہم بھی قبول کرلیتے۔
بنا خطا کیے دے کر سزا گیا کوئی۔
💖
جِسے احساس نہیں تھا میری محبت کا ۔
ہماری موت پر آنسو بہا گیا کوئی۔
💖
جس کی تقلید کیا کرتے تھے محبت میں۔
چھتوں سے پیارے پرندے اُڑا گیا کوئی۔
❤️
صغیر پیار دوبارہ نہ پھر کرے کوئی۔
قبر پر میری یہ دیکر صدا گیا کوئی۔
💖💖❤️💗💖❤️❤️💖
ڈاکٹر صغیر احمد صدیقی
خیرا بازار بہرائچ یو پی انڈیا
💖💖❤️❤️💗❤️❤️💖

1 Like · 33 Views
Like

Enjoy all the features of Sahityapedia on the latest Android app.

Install App
You may also like:
Loading...