Read/Present your poetry in Sahityapedia Poetry Open Mic on 30 January 2022.

Register Now
· Reading time: 1 minute

اجالوں کا بہانہ

چھوڑکر گھر لگے ہیں گھر چلانے میں
سب جوانی گنوا دی کارخانے میں

ایک تقدیر نے بستی جلائی تھی
ہم لگے ہیں وہی شعلہ بجھانے میں

اب کچہری پہنچ کر ہو گیا احساس
کیس سستا نپٹ جاتا ہے تھانے میں

زندگی پر منافع خور حاوی ہیں
زہر اب کے ملایا ہے کرانے میں

اس دفع بھی اجالوں کا بہانہ ہے
کچھ دئیے ہی لگے ہیں گھر جلانے میں

وہ ہمیشہ ہی کیچڑ پھینک جاتے ہیں
ہم لگے ہیں کمل اس پر کھلانے میں

زیر جب دشمنوں نےکر دیا ہم کو
پھر لگے آستینیں وہ چڑھانے میں

غم ہمارے بہت بونے رہے ارشد
دیکھ کر غم زدہ ڈھیروں زمانے میں

2 Likes · 1 Comment · 68 Views
Like
Author
Arshad Rasool फोन : 9411469055/ - जन्म स्थान : बादुल्लागंज, ज़िला बदायूं (उत्तर प्रदेश)। - शिक्षा: एमए, बी एड, एमबीए, ग्रामीण विकास में पीजी डिप्लोमा, मुअल्लिम उर्दू, डिप्लोमा इन जर्नलिज़्म।…

Enjoy all the features of Sahityapedia on the latest Android app.

Install App
You may also like:
Loading...